تازہ ترین

چلاس ہسپتال میں ڈاکٹروں کی عدم موجودگی،نوبلائز مشین اور جنریٹر کی خرابی کی وجہ سے سانس کی تکلیف میں مبتلا ۴ ماہ کی بچی دم توڑ گئی

چلاس: پھسو ٹائمزاُردُو : فخر عالم

چلاس ہسپتال میں ڈاکٹروں کی عدم موجودگی،نوبلائز مشین اور جنریٹر کی خرابی کی وجہ سے سانس کی تکلیف میں مبتلا ۴ ماہ کی بچی دم توڑ گئی،لواحقین کا احتجاج ۔گزشتہ روز سانس کی تکلیف میں مبتلا ۴ ماہ کی بچی کو جب ہسپتال لایا گیا تو ہسپتال میں بجلی نہ ہونے کی وجہ سے بجلی پر چلنے والے آلات بند پڑھ گئے اور آلات چلانے کیلئے جنریٹر بھی کام نہیں آسکا ،جس کی وجہ سے ہسپتال میں داخل ۴ماہ کی کمسن بچی ماں کی گود میں سسکتی اور چیختی دم توڑ گئی ہے ۔چلاس میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے بچی کے لواحقین عاطف محمود و دیگر نے کہا کہ ہمارے بچی کو سانس کی تکلیف تھی اور جب بچی کو ہسپتال لایا گیا تو ہسپتال میں کوئی ڈاکٹر موجود نہیں تھا ،ہسپتال کے ایمرجنسی میں نرس نے بچی کی سانس کی تکلیف کوکم کرنے کیلئے نوبلائز لگایا تو بجلی نہیں تھی اور نوبلائز کام نہ آسکا،ہم نے ہسپتال کے چکر کاٹے اور جنریٹر چلانے کی درخواست کی تو کہا گیا کہ جنریٹر ایک سال سے خراب پڑا ہے ،بچی کی چیخنے کی آوازیں برداشت نہ کرسکے اور ڈاکٹروں کی تلاش میں ہسپتال کا چھان بین مارا لیکن کوئی ڈاکٹر نظر نہیں آیا ،یوں ہماری بچی ہمارے نظروں کے سامنے ماں کی گود میں ہسپتال کے بستر پر بلکتی ،سسکتی اور چیختی دم توڑ گئی لیکن کوئی مسیحا مسیحائی کیلئے نہیں آیا ۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعلی اور چیف سیکرٹری چلاس ہسپتال کی حالت زار کا نوٹس لیں اور ہمیں انصاف فراہم کریں ۔انہوں نے کہا کہ اگر ہسپتال میں بجلی ہوتی اور نوبلائز مشین بچی کے منہ پر لگایا جاتا تو سانس کی تکلیف کنٹرول ہوتی اور ہماری بچی بچ جاتی لیکن ہسپتال انتظامیہ کی غفلت کی وجہ سے ہماری بچی کی جان چلی گئی ہے ،ہمیں انصاف فراہم کیا جائے ۔

About Passu Times

ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

error: Content is protected !!